Tuesday September 06, 2016

 

 CONTENTS

 Home

 News

 Editorial

 Opinion

 Fauji's Diaries

 Story

 Letters

 Community/Culture

 PW Policy

Ashraf's Articles-1

Ashraf's Articles-2

Ashraf's Urdu Poem

About Us

 
 
 
 

The Life of Jinnah

 

 

خواب

کے اشرف

 

میں اب بھی

خواب دیکھ رہا ہوں

ایک پرامن دنیا کے

مسکراتے ہوے چہروں کے

چمکتی آنکھوں کے

اور

زندگی کی توانایوں سے بھرپور

کھلکھلاتے بچوں کے

 

کیا اس خوں آلود دنیا میں

جہاں آنکھیں

جیل بن چکی ہیں

اور

انسانی چہرے

دیواروں پر لکھی

بہودہ تحریروں میں

ڈھل چکے ہیں

پرامن دنیا کے خواب

دیکھے جا سکتے ہیں

 

کون ہے جس نے

زندگی کے شیریں پانیوں کے

چشموں کو

اس طرح مسموم کیا ہے

کہ اب عورتیں

قاتلوں کو جنم دیتی ہیں

یا مقتولوں کو

 

قاتل بھی ایسے

جو محض شوق قتل میں

قتال کرتے ہیں

اور مقتول بھی ایسے

جو بے خبری میں

مقتل گاہوں کی طرف

بڑھے چلے جاتے ہیں

 

اس تیرگئی شب میں

کسی بھی افق پر

کوئی آفتاب تو کیا

کہیں کوئی ستارہ بھی نہیں

 

میں اب بھی

خواب دیکھ رہا ہوں

ایک پرامن دنیا کے

ایک ایسی دنیا کے

جس میں

ہرپیدا ہونے والے بچے کی

صداے اولیں

نغمہ امن بنے

اس تیرگئی شب میں

گل مہتاب بنے

چمکتا آفتا ب بنے

 

میں اب بھی

خواب دیکھ رہا ہوں

ایک پرامن دنیا کے

 

برکلے، کیلیفورنیا

14 مارچ 2010

 

Pakistan Weekly - All Rights Reserved

Site Developed and Hosted By Copyworld Inc.